52

غیب اور آخرت پر ایمان کے ثمرات-خطبہ جمعہ بیت اللہ

مسجد حرام کے امام وخطیب فضیلۃ الشیخ ڈاکٹر صالح بن محمد آل طالب
جمعۃ المبارک 16 رمضان المبارک 1439ھ بمطابق 1 جون 2018
عنوان: غیب اور آخرت پر ایمان کے ثمرات
پہلا خطبہ:
تعریف اللہ ہی کے لیے ہے۔ ہم اللہ تعالیٰ کی حمد وثنا بیان کرتے ہیں، اسی پر بھروسہ اور اعتماد کرتے ہیں اور اسی سے معافی مانگتے ہیں۔ اپنے نفس کے شر سے اور اپنے برے اعمال سے اللہ کی پناہ میں آتے ہیں۔ جسے اللہ تعالیٰ ہدایت عطا فرما دے اسے کوئی گمراہ نہیں کر سکتا اور جسے اللہ تعالیٰ گمراہ کر دے اسے کوئی ہدایت نہیں دے سکتا۔ میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی الٰہ نہیں۔ وہ واحد ہے اس کا کوئی شریک نہیں۔ میں یہ بھی گواہی دیتا ہوں کہ ہمارے نبی سیدنا محمد ﷺ اللہ کے بندے اور رسول ہیں۔ اللہ کی رحمتیں، برکتیں اور سلامتی ہو آپ ﷺ پر، آپ ﷺ کے پاکیزہ ہل بیت پر، نیک اور روشن پیشانیوں والے صحابہ کرام پر، تابعین پر اور قیامت تک ان کے نقش قدم پر چلنے والوں پر۔
لوگو! میں اپنے آپ کو اور آپ سب کو ہر کھلے اور چھپے کام میں اللہ تعالیٰ سے ڈرنے کی تلقین کرتا ہوں۔ فرمان الٰہی ہے:
’’وہی گناہ معاف کرنے والا اور توبہ قبول کرنے والا ہے، سخت سزا دینے والا اور بڑا صاحب فضل ہے کوئی معبود اس کے سوا نہیں، اُسی کی طرف سب کو پلٹنا ہے‘‘
(غافر: 3)
آخرت کی خوب تیاری کرو۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’اس دن کی رسوائی اور مصیبت سے بچو، کہ جب تم اللہ کی طرف واپس ہو گے، وہاں ہر شخص کو اس کی کمائی ہوئی نیکی یا بدی کا پورا پورا بدلہ مل جائے گا اور کسی پر ظلم ہرگز نہ ہو گا‘‘
(البقرۃ: 281)
عبادت فرض کرنے کا مقصد یہی ہے کہ اللہ کی بندگی صحیح انداز میں بجا لائی جا سکے اور لوگوں میں پرہیز گاری پیدا کی جائے۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’اے لوگو جو ایمان لائے ہو، تم پر روزے فرض کر دیے گئے، جس طرح تم سے پہلے انبیا کے پیروؤں پر فرض کیے گئے تھے اس سے توقع ہے کہ تم میں تقویٰ کی صفت پیدا ہوگی‘‘
(البقرۃ: 183)
سنو! آپ کے مہینے کے دن کم ہونے لگے ہیں، اب عبادتیں بڑھا لو۔ رمضان کے دو حصہ گزرنے لگے ہیں مگر افضل ترین حصہ تو ابھی باقی ہے۔ رمضان المبارک کی آخری راتیں نیکی کے میدان مقابلہ کرنے والوں کے لیے بہترین موقع ہے اور اجر کمانے والوں کے لیے شاندار وقت ہے۔
حدیث میں آتا ہے کہ رسول اللہ ﷺ رمضان المبارک کے آخری عشرے میں اتنی زیادہ عبادت کرتے تھے جتنی عبادت وہ دیگر دنوں میں نہیں کرتے تھے۔ اسے امام مسلم نے روایت کیا ہے۔
صحیح بخاری اور صحیح مسلم کی روایت ہے کہ جب آخری عشرہ آ جاتا تو رسول اللہ ﷺ کمر کس لیتے، ساری رات عبادت کرتے اور اپنے گھر والوں کو بھی جگاتے۔
آخری عشرے میں ایک ایسی رات ہے جو ایک ہزار مہینوں سے افضل ہے۔ فرمانِ نبوی ہے:
جس نے ایمان اور اخلاص کے ساتھ لیلۃ القدر کی عبادت کی اس کے پچھلے سارے گناہ معاف ہو گئے۔ اسے امام بخاری اور امام مسلم نے روایت کیا ہے۔
سیدہ عائشہ بیان فرماتی ہیں کہ رسول اللہ ﷺ اپنی زندگی کے آخری سال تک رمضان کے آخری دس دنوں کا اعتکاف کرتے رہے اور پھر آپ ﷺ کی بیویاں بھی اعتکاف کرتی رہیں۔ اسے امام بخاری اور امام مسلم نے روایت کیا ہے۔
فرمانِ الٰہی ہے:
’’ہم نے اِس (قرآن) کو شب قدر میں نازل کیا ہے۔ اور تم کیا جانو کہ شب قدر کیا ہے؟ شب قدر ہزار مہینوں سے زیادہ بہتر ہے۔ فرشتے اور روح اُس میں اپنے رب کے اذن سے ہر حکم لے کر اترتے ہیں۔ وہ رات سراسر سلامتی ہے طلوع فجر تک‘‘
(القدر: 1-5)
رمضان المبارک کو پا لینا اللہ تعالیٰ ایک عظیم نعمت اور گراں قدر احسان ہے۔ یہ مہینہ روزوں اور قیام کا مہینہ ہے۔ یہ مہینہ گناہوں کی معافی اور کوتاہیوں کے ازالے کا مہینہ ہے۔ جو ایمان اور اخلاص کے ساتھ اس کے روزے رکھتا ہے اور اس کی راتوں کی عبادت کرتا ہے اس کے پچھلے سارے گناہ معاف کر دئیے جاتے ہیں۔
یہ مہینہ نماز، دعا اور قرآن کا مہینہ ہے۔ یہ صدقہ خیرات، توبہ اور احسان کا مہینہ ہے۔ یہ مسلمانوں کی فتوحات کا یادگار مہینہ ہے۔ اس مہینے میں جتنا ہو سکے، اللہ تعالیٰ کا قرب حاصل کرنے کی کوشش کرو اور اللہ سے امیدیں وابستہ رکھو اور خوش ہو جاؤ۔
بعد ازاں! اے مسلمانو!
فرمانِ الٰہی ہے:
’’رمضان وہ مہینہ ہے، جس میں قرآن نازل کیا گیا جو انسانوں کے لیے سراسر ہدایت ہے اور ایسی واضح تعلیمات پر مشتمل ہے، جو راہ راست دکھانے والی اور حق و باطل کا فرق کھول کر رکھ دینے والی ہیں‘‘
(البقرۃ: 185)
قرآن کریم رمضان المبارک میں نازل ہوا تو اسے اس صبح صادق کی حیثیت دی گئی کہ جس کے پہلے انسانیت اندھیری رات میں تھی۔ قرآن کریم کے نور سے سارے اندھیرے مٹ جاتے ہیں۔ اگر امت اسلامیہ ہدایت حاصل کرنے کے لیے اسی کی طرف رجوع کرے تو اللہ تعالیٰ اس کے معاملات بھی سمیٹ دے اور اس کی راہ آسان فرما دے۔
امت کو یہی زیب دیتا ہے کہ وہ ہر وقت قرآن کریم سے جڑی رہے۔ پیاسوں کی طرح اسی کا ٹھنڈا پانی پیے۔ اسے صرف پڑھنے پر اکتفا نہ کرے، بلکہ اس کے معانی پر غور وخوض کرے، تامل اور تدبر کرے، تاکہ لوگوں کی سوچ بھی اسی میں آنے والے مسائل سے جڑ جائے۔ وہ انہی کے متعلق بات کریں، توحید، آخرت اور رسالت پر گفتگو کریں، ان ہی عقائد، شرائع اور اخلاق کو درست سمجھیں جنہیں قرآن کریم نے درست ٹھہرایا ہے۔ ہر چیز کو اتنی ہی اہمیت دیں جتنی قرآن کریم نے دی ہے۔ نہ کم کریں اور نہ زیادہ۔ اگر ہم ایسا کر لیں تو ہم حقیقی معنوں میں قرآن کریم کی طرف لوٹ آئے ہیں اور امت کو آج اس چیز کی بڑی ضرورت ہے۔
اللہ کے بندو!
جو قرآن کریم کا مطالعہ کرتا ہے، اسے معلوم ہو جاتا ہے کہ قرآن کریم نے آخرت اور موت کے بعد زندگی کو بڑی وضاحت سے بیان کیا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں کئی مقامات پر اس کا ذکر فرمایا ہے۔ اسے بار بار دھرایا گیا ہے اور اسے واضح کرنے کے لیے بہت سی مثالیں اور دلیلیں دی گئی ہیں۔ قرآن کریم میں تین جگہوں پر نبی اکرم ﷺ کو آخرت کے آنے پر قسم کھانے کا حکم دیا گیا۔ فرمایا:
’’منکرین نے بڑے دعوے سے کہا ہے کہ وہ مرنے کے بعد ہرگز دوبارہ نہ اٹھائے جائیں گے ان سے کہو نہیں، میرے رب کی قسم تم ضرور اٹھائے جاؤ گے، پھر ضرور تمہیں بتایا جائے گا کہ تم نے (دنیا میں) کیا کچھ کیا ہے، اور ایسا کرنا اللہ کے لیے بہت آسان ہے‘‘
(التغابن: 7)
اسی طرح فرمایا:
’’منکرین کہتے ہیں کہ کیا بات ہے کہ قیامت ہم پر نہیں آ رہی ہے! کہو، قسم ہے میرے عالم الغیب پروردگار کی، وہ ضرور آئے گی‘‘
(سبأ: 3)
اسی طرح فرمایا:
’’پھر پُوچھتے ہیں کیا واقعی یہ سچ ہے جو تم کہہ رہے ہو؟ کہو میرے رب کی قسم، یہ بالکل سچ ہے اور تم اتنا بل بوتا نہیں رکھتے کہ اسے ظہُور میں آنے سے روک دو‘‘
(یونس: 53)
آخرت پر ایمان لانا ایمان کا ایک ضروری حصہ ہے۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’نیکی یہ نہیں ہے کہ تم نے اپنے چہرے مشرق کی طرف کر لیے یا مغرب کی طرف، بلکہ نیکی یہ ہے کہ آدمی اللہ کو اور یوم آخر اور ملائکہ کو اور اللہ کی نازل کی ہوئی کتاب اور اس کے پیغمبروں کو دل سے مانے‘‘
(بقرۃ: 177)
حدیث جبریل میں آتا ہے کہ جب جبریل امت کو دین سکھانے کے لیے آئے تو رسول اللہ ﷺ نے دین کے اصول اور اس کی بنیادی باتیں بیان فرمائیں۔ حدیث میں آتا ہے کہ جبریل نے پوچھا: ایمان کیا ہے؟ آپ ﷺ نے فرمایا: ایمان یہ ہے کہ اللہ پر، اس کے فرشتوں پر، اس کی کتابوں پر، اس کے رسولوں پر، روز آخرت پر اور اچھی اور بری تقدیر پر ایمان رکھا جائے۔ اس پر جبریل نے کہا: آپ نے سچ بتایا۔ اسے امام مسلم نے روایت کیا ہے۔
اُبَیّ بن خلف یا عاص بن وائل رسول اللہ ﷺ کے پاس آیا اور اس کے ہاتھ میں بوسیدہ ہڈی تھی۔ اس نے اس کے بقایا ہوا میں بکھیرتے ہوئے کہا: محمد! کیا تم یہ دعویٰ کرتے ہو کہ اللہ اسے دوبارہ اٹھائے گا؟ آپ ﷺ نے فرمایا: جی ہاں! تمہیں بھی موت دے گا، پھر اٹھائے گا، پھر تجھے جہنم میں ڈالے گا۔ اس پر اللہ تعالیٰ یہ آیات نازل فرمائیں:
’’کیا انسان دیکھتا نہیں ہے کہ ہم نے اسے نطفہ سے پیدا کیا اور پھر وہ صریح جھگڑالو بن کر کھڑا ہو گیا؟ اب وہ ہم پر مثالیں چسپاں کرتا ہے اور اپنی پیدائش کو بھول جاتا ہے کہتا ہے: کون ان ہڈیوں کو زندہ کرے گا جبکہ یہ بوسیدہ ہو چکی ہوں؟ اس سے کہو، اِنہیں وہی زندہ کرے گا جس نے پہلے انہیں پیدا کیا تھا، اور وہ تخلیق کا ہر کام جانتا ہے۔ وہی جس نے تمہارے لیے ہرے بھرے درخت سے آگ پیدا کر دی اور تم اس سے اپنے چولہے روشن کرتے ہو۔ کیا وہ جس نے آسمانوں اور زمین کو پیدا کیا اِس پر قادر نہیں ہے کہ اِن جیسوں کو پیدا کر سکے؟ کیوں نہیں، جبکہ وہ ماہر خلاق ہے۔ وہ تو جب کسی چیز کا ارادہ کرتا ہے تو اس کا کام بس یہ ہے کہ اسے حکم دے کہ ہو جا اور وہ ہو جاتی ہے۔ پاک ہے وہ جس کے ہاتھ میں ہر چیز کا مکمل اقتدار ہے، اور اسی کی طرف تم پلٹائے جانے والے‘‘
(یٰس: 77-83)
لوگو!
دلوں کی بیماریوں کا بہترین علاج وعظ ہے اور بہترین وعظ آخرت کی یاد ہے، قبروں سے نکلنے اور میدان حشر کو نظروں کے سامنے لانا ہے۔
وہ دن کہ جب لوگوں کے درمیان ہر قسم کے امتیازات ختم ہو جائیں گے، حقائق سامنے آ جائیں گے، آراء اور خود ساختہ افکار کا دروازہ بند ہو چکا ہو گا۔ جس دن ہر انسان اکیلا اللہ کے سامنے پیش ہو گا۔ اس کے ساتھ کوئی نہ ہو گا اور اللہ تعالیٰ سے اس کی کوئی بات چھپی نہ ہو گی۔ وہ ملاقات بڑی ہولناک ہو گی اور انسان بڑی مشکل میں ہو گا۔ وہ اپنی مکمل عاجزی کے ساتھ اللہ تعالیٰ کے سامنے حاضر ہو گا اور اللہ سے کوئی بات چھپی نہ ہو گی۔ راز کی باتیں بھی اس کے علم میں ہوں گی اور پوشیدہ چیزیں بھی اس کے یہاں ظاہر اور واضح ہوں گی۔
اے مسلمانو!
موت کے بعد نئی زندگی کا آغاز، فنا کے بعد دوسری حیات کی ابتدا اور قیامت کے دن کی ہولناکیاں دیکھ کر نیک لوگوں کے دل ڈر جاتے ہیں، عبادت گزاروں کی نیندیں اڑ جاتی ہیں اور پختہ یقین رکھنے والوں کے دل لرز اٹھتے ہیں۔
وہ دن دوسرے دنوں کی طرح کا نہیں ہو گا۔ جب ساری دنیا پر کوئی زندہ چیز نظر نہ آ رہی ہو گی۔ ساری دنیا میں عجب سناٹا ہو گا، ساری مخلوقات فنا ہو چکی ہوں گی۔ پھر اللہ تعالیٰ بادلوں کو بارش برسانے کا حکم دے گا۔ چالیس دن تک پھوار کی مانند تیز بارش ہوتی رہے گی اور اس بارش سے لوگوں کے جسم پھر سے سبزی کی طرح اگنے لگیں گے۔ اس وقت لوگوں کے جسم فنا ہو چکے ہوں گے۔ بس کمر کا آخری گول حصہ ہی بچا ہو گا۔ اسی حصے سے اللہ تعالیٰ لوگوں کو پھر سے پیدا کرے گا۔
پھر اسرافیل صور میں پھونکے گے اور سب لوگوں کی روحیں واپس ان کے جسموں میں ڈال دی جائیں گی۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’پھر ایک صور پھونکا جائے گا اور یکایک یہ اپنے رب کے حضور پیش ہونے کے لیے اپنی قبروں سے نکل پڑیں گے‘‘
(یٰس: 51)
قبریں کھل جائیں گی اور سب مدفون باہر نکل آئیں گے۔ آدم سے لے دنیا کے آخری لمحے تک آنے والے لوگ اکٹھے ہوں گے۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’اور صُور پھُونکا جائے گا اور ہم سب انسانوں کو ایک ساتھ جمع کریں گے‘‘
(الکہف: 99)
اسی طرح فرمایا:
’’ایک ہی زور کی آواز ہو گی اور سب کے سب ہمارے سامنے حاضر کر دیے جائیں گے‘‘
(یٰس: 53)
اب آپ ذرا تصور کیجیے کہ وہ وقت کتنا ہولناک ہو گا جب زمین پھٹے گی اور لوگ اپنی قبروں سے نکل آئیں گے اور سب اللہ تعالیٰ کے سامنے کھڑے ہوں گے۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’بس ایک ہی جھڑک ہو گی اور یکایک یہ اپنی آنکھوں سے (وہ سب کچھ جس کی خبر دی جا رہی ہے) دیکھ رہے ہوں گے‘‘
(الصافات: 19)
قبریں پھٹ جائیں گی اور لوگ قبر کی نعمتوں یا عذاب میں، کشادی یا تنگی میں سالہا سال اور صدیاں گزارنے کے بعد باہر نکل آئیں گے۔ سب سے پہلے رسول اللہ ﷺ کی قبر مبارک کھلے گی۔ آپ ﷺ کا فرمان ہے:
میں اولاد آدم کا سردار ہوں۔ سب سے پہلے میری قبر کھلے کی۔ سب سے پہلے میں سفارش کروں گا اور سب سے پہلے میری سفارش قبول کی جائے گی۔
لوگ ایسی حالت میں اٹھائے جائیں گے کہ ان پر نہ کوئی کپڑا ہو گا اور نہ ان کے ختنے ہی ہوئے ہوں گے۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’جس طرح پہلے ہم نے تخلیق کی ابتدا کی تھی اُسی طرح ہم پھر اُس کا اعادہ کریں گے‘‘
(الانبیاء: 104)
سیدہ عائشہ نے رسول اللہ ﷺ سے دریافت کیا: اے اللہ کے رسول! مرد اور عورتیں اکٹھے ہوں گے اور وہ ایک دوسرے کو دیکھیں گے؟ آپ ﷺ نے فرمایا: معاملہ اس سے بہت بڑا ہو گا۔ یعنی وہ اتنی اہم چیز میں مصروف ہوں گے کہ ان کا دھیان اس طرف جائے گا ہی نہیں۔
سب سے پہلے ابراہیم کو کپڑے نصیب ہوں گے۔
جب لوگ قبروں سے نکلیں گے تو وہ کبھی اِدھر جائیں گے تو کبھی اُدھر۔ ایک دوسرے کو لگتے رہیں گے۔ کسی کو معلوم نہ ہو گا کہ کیا کرنا ہے اور کس طرف جانا ہے۔ کبھی آپ نے بکھرے ہوئے پروانے دیکھے ہیں؟ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:
’’وہ دن جب لوگ بکھرے ہوئے پروانوں کی طرح ہوں گے‘‘
(القارعۃ: 4)
اسی طرح فرمایا:
’’اِس طرح نکلیں گے گویا وہ بکھری ہوئی ٹڈیاں ہیں۔ پکارنے والے کی طرف دوڑے جا رہے ہوں گے‘‘
(القمر: 7-8)
اسی طرح فرمایا:
’’جس روز وہ تمہیں پکارے گا تو تم اس کی حمد کرتے ہوئے اس کی پکار کے جواب میں نکل آؤ گے اور تمہارا گمان اُس وقت یہ ہوگا کہ ہم بس تھوڑی دیر ہی اِس حالت میں پڑے رہے ہیں‘‘
(الاسراء: 52)
لوگوں سے کہا جائے گا: لوگو! اپنے رب کی طرف آ جاؤ۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’اس روز سب لوگ منادی کی پکار پر سیدھے چلے آئیں گے، کوئی ذرا اکڑ نہ دکھا سکے گا اور آوازیں رحمان کے آگے دب جائیں گی، ایک سرسراہٹ کے سوا تم کچھ نہ سنو گے‘‘
(طٰہٰ: 108)
اسی طرح فرمایا:
’’پھر جونہی صور پھونک دیا گیا، ان کے درمیان پھر کوئی رشتہ نہ رہے گا اور نہ وہ ایک دوسرے کو پوچھیں گے‘‘
(المومنون: 101)
یوں فرمایا:
’’اُس روز آدمی اپنے بھائی۔ اور اپنی ماں اور اپنے باپ۔ اور اپنی بیوی اور اپنی اولاد سے بھاگے گا۔ ان میں سے ہر شخص پر اس دن ایسا وقت آ پڑے گا کہ اسے اپنے سوا کسی کا ہوش نہ ہوگا‘‘
(عبس: 34-37)
اسی طرح فرمایا:
’’وہ دن جبکہ سب لوگ بے پردہ ہوں گے، اللہ سے ان کی کوئی بات بھی چھپی ہوئی نہ ہو گی‘‘
(غافر: 16)
اللہ سبحانہ وتعالیٰ پوچھیں گے:
’’آج بادشاہی کس کی ہے؟‘‘
پھر اپنا جواب خود ہی دیتے ہوئے فرمائیں گے:
’’اللہ واحد قہار کی۔ آج ہر متنفس کو اُس کمائی کا بدلہ دیا جائے گا جو اس نے کی تھی آج کسی پر کوئی ظلم نہ ہو گا‘‘
(غافر: 16-17)
اسی طرح فرمانِ الٰہی ہے:
’’اور جس د ن وہ کہے گا کہ حشر ہو جائے اسی دن وہ ہو جائے گا اس کا ارشاد عین حق ہے اور جس روز صور پھونکا جائیگا، اس دن اسی کی بادشاہت ہو گی‘‘
(الانعام: 73)
ایک شخص کو قبر سے نکالا جائے گا تو وہ تلبیہ پڑھ رہا ہو گا۔ لبیک اللہم لبیک، کیونکہ وہ حالت احرام میں فوت ہوا تھا، دوسرا شخص قبر سے نکالا جائے گا تو اس کے زخموں سے خون بہہ رہا ہو گا۔ رنگ خون کا ہو گا مگر خوشبو مشک کی ہو گی۔ یہ شخص شہید ہو گا۔
لوگ میدان محشر کی طرف لیجائے جائیں گے۔ میدان محشر ایک کھلا اور سفید میدان ہو گا۔ اس میں کوئی چیز نہ ہو گی۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’یہ لوگ تم سے پُوچھتے ہیں کہ آخر اُس دن یہ پہاڑ کہاں چلے جائیں گے؟ کہو کہ میرا رب ان کو دھول بنا کر اڑا دے گا۔ اور زمین کو ایسا ہموار چٹیل میدان بنا دے گا۔ کہ اس میں تم کوئی بل اور سلوٹ نہ دیکھو گے‘‘
(طٰہٰ: 105-107)
مومن بھی میدان محشر کی طرف لیجائے جائیں گے۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’وہ دن آنے والا ہے جب متقی لوگوں کو ہم مہمانوں کی طرح رحمان کے حضور پیش کریں گے‘‘
(مریم: 85)
اور مجرم اس حال میں گھیر کر لائے جائیں گے کہ خوف کے مارے ان کی آنکھیں پتھرائی ہوئی ہوں گی، دل ڈرے ہوئے ہوں گے، کچھ کی نظریں شرم کے مارے نیچی ہوں گی اور کچھ کی نظریں آسمان سے لگی ہوں گی۔ کافروں کو منہ کے بل چلایا جائے گا۔
ایک شخص نے دریافت کیا: اے اللہ کے نبی! کافر اپنے منہ کے بل کس طرح چلے گا؟ آپ ﷺ نے فرمایا: کیا جس نے دنیا میں اسے پاؤں پر چلنے کی صلاحیت دی ہے وہ اسے قیامت کے دن منہ کے بل نہیں چلا سکتا؟ فرمانِ الٰہی ہے:
’’ان لوگوں کو ہم قیامت کے روز اوندھے منہ کھینچ لائیں گے، اندھے، گونگے اور بہرے اُن کا ٹھکانا جہنم ہے جب کبھی اس کی آگ دھیمی ہونے لگے گی ہم اسے اور بھڑکا دیں گے‘‘
(الاسراء: 97)
تکبر کرنے والے انسانی شکل میں اٹھائے جائیں گے مگر اتنے چھوٹے کہ ذرے لگیں گے۔
ساری مخلوقات کو اکٹھا کیا جائے گا۔ حتیٰ کہ وحشی جانوروں اور چوپاؤں کو بھی لایا جائے گا۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’اور جب جنگلی جانور سمیٹ کر اکٹھے کر دیے جائیں گے‘‘
(التکویر: 5)
اسی طرح فرمایا:
’’زمین میں چلنے والے کسی جانور اور ہوا میں پروں سے اڑنے والے کسی پرندے کو دیکھ لو، یہ سب تمہاری ہی طرح کی انواع ہیں، ہم نے ان کی تقدیر کے نوشتے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی ہے، پھر یہ سب اپنے رب کی طرف سمیٹے جاتے ہیں‘‘
(الانعام: 38)
اسی طرح فرمایا:
’’اے نبیؐ، اِن لوگوں سے کہو، یقیناً اگلے اور پچھلے سب، ایک دن ضرور جمع کیے جانے والے ہیں جس کا وقت مقرر کیا جا چکا ہے‘‘
(الواقعۃ: 49-50)
یوں فرمایا:
’’وہ ایک دن ہوگا جس میں سب لوگ جمع ہوں گے اور پھر جو کچھ بھی اُس روز ہو گا سب کی آنکھوں کے سامنے ہوگا‘‘
(ہود: 103)
اسی طرح فرمایا:
’’فکر اُس دن کی ہونی چاہیے جب ہم پہاڑوں کو چلائیں گے، اور تم زمین کو بالکل برہنہ پاؤ گے، اور ہم تمام انسانوں کو اس طرح گھیر کر جمع کریں گے کہ (اگلوں پچھلوں میں سے) ایک بھی نہ چھوٹے گا‘‘
(الکہف: 47)
اس مجمع میں کہ جس میں اولین واخرین موجود ہوں گے، دھوکہ دینے والوں کے علم بلند کیے جائیں گے۔ بتایا جائے گا کہ فلان کی غداری ہے اور یہ فلاں کا دھوکہ ہے۔
جس شخص نے ناحق مسلمانوں کا مال غصب کیا ہو گا وہ اسے اپنی کمر پر اٹھا کر لائے گا، چاہے وہ سونا چاندی ہو یا کوئی اور چیز۔ نبی کریم ﷺ کا فرمان ہے:
دیکھنا! ایسا نہ ہو کہ قیامت کے دن تم اپنی کندھے پر بلبلاتے اونٹ کو اٹھا کر لاؤ اور پھر مجھ سے کہو: اے اللہ کے رسول! میری مدد کیجیے! اس وقت میں کہوں گا: میں نے تمہیں خبردار کر دیا تھا۔ اب تجھے اللہ سے میں نہیں بچا سکتا۔
اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے:
’’جو کوئی خیانت کرے تو وہ اپنی خیانت سمیت قیامت کے روز حاضر ہو جائے گا‘‘
(آل عمران: 161)
فرمانِ الٰہی ہے:
’’زمین اپنے رب کے نور سے چمک اٹھے گی‘‘
یعنی جب اللہ تعالیٰ لوگوں میں فیصلہ کرنے کے لیے جلوہ فرما ہو گا تو زمین روشن ہو جائے گی۔
’’کتاب اعمال لا کر رکھ دی جائے گی‘‘
جس میں ہمارے اعمال لکھے ہوئے ہوں گے۔
’’انبیاء حاضر کر دیے جائیں گے‘‘
جو اپنی اپنی امتوں پر گواہ ہوں گے کہ انہوں نے اللہ تعالیٰ کا پیغام پہنچا دیا ہے۔
’’تمام گواہ حاضر کر دیے جائیں گے‘‘
جو کہ اولاد آدم کے اعمال لکھ چکے ہوں گے اور ان پر گواہ ہوں گے۔
’’لوگوں کے درمیان ٹھیک ٹھیک حق کے ساتھ فیصلہ کر دیا جائے گا اور اُن پر کوئی ظلم نہ ہوگا‘‘
(الزمر: 96)
فرمانِ باری تعالیٰ ہے:
’’قیامت کے روز ہم ٹھیک ٹھیک تولنے والے ترازو رکھ دیں گے، پھر کسی شخص پر ذرہ برابر ظلم نہ ہو گا جس کا رائی کے دانے کے برابر بھی کچھ کیا دھرا ہو گا وہ ہم سامنے لے آئیں گے اور حساب لگانے کے لیے ہم کافی ہیں‘‘
(الانبیاء: 47)
اس دن چہرے یا تو سفید چمکتے ہوں گے یا پھر کالے سیاہ۔ میزان ہلکے یا پھر بھاری۔ نامہ اعمال یا تو لوگوں کے دائیں ہاتھوں میں ہوں گے یا پھر بائیں ہاتھوں میں۔
اللہ اکبر! کتنا ہولناک منظر ہو گا! فرمانِ الٰہی ہے:
’’ایک ایسے دن میں جس کی مقدار پچاس ہزار سال ہے‘‘
(المعارج: 4)
لوگ دیر تک کھڑے رہیں گے اور سورج ان سے بہت قریب آ جائے گا یہاں تک کہ وہ ایک میل کے فاصلے پر رہ جائے گا۔ لوگ اپنے اعمال کے مطابق پسینے میں ہوں گے، جبکہ کچھ خوش قسمت لوگ عرش الٰہی کے سائے میں ہوں گے۔ اس دن اس سائے کے سوا کوئی سایہ نہیں ہو گا۔ پھر اللہ تعالیٰ محمد ﷺ کو سفارش کرنے کی اجازت دیں گے اور انہیں مقام محمود عطا فرمائیں گے۔
اللہ کی رحمتیں ہوں رسول اللہ ﷺ پر۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’اور تم دیکھو گے کہ فرشتے عرش کے گرد حلقہ بنائے ہوئے اپنے رب کی حمد اور تسبیح کر رہے ہوں گے، اور لوگوں کے درمیان ٹھیک ٹھیک حق کے ساتھ فیصلہ چکا دیا جائے گا، اور پکار دیا جائے گا کہ حمد ہے اللہ ربّ العالمین کے لیے‘‘
(الزمر: 75)
اللہ اولین اور آخرین کے درمیان فیصلہ فرمائیں گے۔ سارے جہان کو زبان مل جائے گی، سب اللہ تعالیٰ کے سامنے گویا ہوں گے اور اس کے فیصلوں اور عدل کی تعریف کریں گے۔ ساری مخلوقات اس کی ثنا کرے گی۔
قتادۃ بیان کرتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے کائنات کی تخلیق کی ابتدا اپنی تعریف سے کی، فرمایا:
’’تعریف اللہ کے لیے ہے جس نے زمین اور آسمان بنائے‘‘
(الانعام: 1)
پھر قیامت کے فیصلوں کا اختتام بھی اپنی تعریف پر فرمایا۔ فرمایا:
’’اور تم دیکھو گے کہ فرشتے عرش کے گرد حلقہ بنائے ہوئے اپنے رب کی حمد اور تسبیح کر رہے ہوں گے، اور لوگوں کے درمیان ٹھیک ٹھیک حق کے ساتھ فیصلہ چکا دیا جائے گا، اور پکار دیا جائے گا کہ حمد ہے اللہ ربّ العالمین کے لیے‘‘
(الزمر: 75)
فرمانِ الٰہی ہے:
’’رہے وہ لوگ جن کے لیے ہماری طرف سے بھَلائی کا پہلے ہی فیصلہ ہو چکا ہو گا، تو وہ یقیناً اُس (جہنم) سے دُور رکھے جائیں گے۔ اس کی سرسراہٹ تک نہ سُنیں گے اور وہ ہمیشہ ہمیشہ اپنی من بھاتی چیزوں کے درمیان رہیں گے۔ وہ انتہائی گھبراہٹ کا وقت اُن کو ذرا پریشان نہ کرے گا، اور ملائکہ بڑھ کر اُن کو ہاتھوں ہاتھ لیں گے کہ یہ تمہارا وہی دن ہے جس کا تم سے وعدہ کیا جاتا تھا‘‘
(الانبیاء: 101-103)
اے اللہ! ڈر کے دن ہمیں امن نصیب فرما! نبی کریم ﷺ کے حوض مبارک سے پینا نصیب فرما! ہمارے نامہ اعمال دائیں ہاتھ میں تھما۔ اے پروردگار عالم! ہمیں جنت الفردوس نصیب فرما!
اللہ قرآن وحدیث کو میرے لیے اور آپ کے لیے برکت کا باعث بنائے، آیات اور ذکر حکیم سے فائدہ حاصل کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ میں اسی پر اکتفا کرتا ہوں۔ اپنے لیے اور آپ کے لیے اللہ تعالیٰ سے معافی مانگتا ہوں۔
دوسرا خطبہ:
تعریف اللہ رب العالمین ہی کے لیے ہے۔ وہی رحمٰن ورحیم ہے اور روز جزا کا مالک ہے۔ میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی الٰہ نہیں۔ وہ واحد ہے۔ اس کا کوئی شریک نہیں۔ وہی حقیقی بادشاہ اور سب پر غالب ہے۔ میں یہ بھی گواہی دیتا ہوں کہ ہمارے نبی سیدنا محمد ﷺ اللہ کے بندے اور رسول ہیں۔ اللہ کی رحمتیں اور برکتیں ہوں آپ ﷺ پر اور تمام صحابہ کرام پر۔
بعدازاں! اے مسلمانو!
آخرت پر اور موت کے بعد کی زندگی پر ایمان سے انسان کی زندگی کا رخ درست ہو جاتا ہے۔ اسی ایمان سے جسم کے اعضا فرمان برداری میں لگ جاتے ہیں۔ گناہوں اور کوتاہیوں سے بچ جاتے ہیں۔ قرآنی آیات بھی یہی بیان کرتی ہیں کہ فرمان برداری اور ایمان بالیوم الآخر میں بہت گہرا تعلق ہے۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’اللہ کی مسجدوں کے آباد کار (مجاور و خادم) تو وہی لوگ ہوسکتے ہیں جو اللہ اور روز آخر کو مانیں‘‘
(التوبہ: 18)
اسی طرح فرمایا:
’’صبر اور نماز سے مدد لو، بیشک نماز ایک سخت مشکل کام ہے۔ مگر ان فرماں بردار بندوں کے لیے مشکل نہیں ہے جو سمجھتے ہیں کہ آخر کار انہیں اپنے رب سے ملنا اور اسی کی طرف پلٹ کر جانا ہے‘‘
(البقرۃ: 45-46)
رسول اللہ ﷺ کو مخاطب کرتے ہوئے فرمایا:
’’اور فیصلے کی گھڑی یقیناً آنے والی ہے، پس اے محمدؐ، تم (اِن لوگوں کی بیہودگیوں پر) شریفانہ درگزر سے کام لو‘‘
(الحجر: 85)
طلاق سے متعلقہ آیات میں فرمان ہے:
’’ان چیزوں کی نصیحت اس شخص کو کی جاتی ہے کہ جو اللہ اور روز آخر پر ایمان لانے والا ہے، یہی شائستہ اور پاکیزہ طریقہ ہے‘‘
(البقرۃ: 232)
جو روز آخرت پر صحیح معنوں میں ایمان رکھتا ہے اور جس کے دل میں آخرت کی فکر زندہ ہوتی ہے وہ گناہوں اور حرام کاموں سے دور رہتا ہے۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’اور مَدیَن کی طرف ہم نے اُن کے بھائی شعیب کو بھیجا اُس نے کہا اے میری قوم کے لوگو، اللہ کی بندگی کرو اور روزِ آخر کے امیدوار رہو اور زمین میں مفسد بن کر زیادتیاں نہ کرتے پھرو‘‘
(عنکبوت: 36)
اللہ تعالیٰ خبردار کرتے ہوئے فرماتے ہیں:
’’تباہی ہے ڈنڈی مارنے والوں کے لیے۔ جن کا حال یہ ہے کہ جب لوگوں سے لیتے ہیں تو پورا پورا لیتے ہیں۔ اور جب ان کو ناپ کر یا تول کر دیتے ہیں تو انہیں گھاٹا کر دیتے ہیں۔ کیا یہ لوگ نہیں سمجھتے کہ ایک بڑے دن یہ اٹھا کر لائے جانے والے ہیں؟ اُس دن جبکہ سب لوگ رب العالمین کے سامنے کھڑے ہوں گے‘‘
(المطففین: 1-6)
اللہ کے بندو!
آخرت پر ایمان لانے سے انسان ایک نیا شخص بن جاتا ہے۔ جو اپنے اخلاق، مبادی اور نظریات میں بالکل مختلف شخص ہوتا ہے۔ آخرت پر ایمان رکھنے والا اور اس کے لیے محنت کرنے والا دنیا کے لیے جینے والے جیسا کبھی نہیں ہو سکتا۔ زندگی کے کسی بھی معاملے میں ان دونوں کا فیصلہ ایک نہیں ہو سکتا۔ ان میں سے ہر ایک کی اپنی سوچ ہے جس کی بنیاد پر وہ چیزوں کا وزن کرتے ہیں اور فیصلے کرتے ہیں۔
آخرت پر ایمان سے دل میں آنے والے شکوک وشبہات دور ہو جاتے ہیں اور اگر یہ ایمان کمزور پڑ جائے تو شکوک وشبہات بڑھ جاتے ہیں۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’اور ہم نے تو اسی طرح ہمیشہ شیطان انسانوں اور شیطان جنوں کو ہر نبی کا دشمن بنایا ہے جو ایک دوسرے پر خوش آیند باتیں دھوکے اور فریب کے طور پر القا کرتے رہے ہیں اگر تمہارے رب کی مشیت یہ ہوتی کہ وہ ایسا نہ کریں تو وہ کبھی نہ کرتے پس تم اُنہیں ان کے حال پر چھوڑ دو کہ اپنی افترا پردازیاں کرتے رہیں۔ (یہ سب کچھ ہم انہیں اسی لیے کرنے دے رہے ہیں کہ) جو لوگ آخرت پر ایمان نہیں رکھتے اُن کے دل اِس (خوشنما دھوکے) کی طرف مائل ہوں اور وہ اس سے راضی ہو جائیں اور اُن برائیوں کا اکتساب کریں جن کا اکتساب وہ کرنا چاہتے ہیں‘‘
(الانعام: 112-113)
جب انسان آخرت پر یقین اپنے دل میں بیٹھا لیتا ہے تو اسے یقین ہو جاتا ہے کہ وہ موت کے بعد پھر سے اٹھایا جائے گا اور وہ بہت سے شکوک وشبہات سے بچ جاتا ہے اور جو حضور قلبی کے ساتھ قرآن کریم کی تلاوت کرتا ہے اس کا دل پاکیزہ ہو جاتا ہے کیونکہ یہ اللہ کا کلام ہے اور اس میں دلوں اور جسموں کی بیماریوں کی شفا ہے۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’ہم اِس قرآن کے سلسلہ تنزیل میں وہ کچھ نازل کر رہے ہیں جو ماننے والوں کے لیے تو شفا اور رحمت ہے، مگر ظالموں کے لیے خسارے کے سوا اور کسی چیز میں اضافہ نہیں کرتا‘‘
(الاسراء: 82)
اے مسلمانو!
آخرت پر ایمان رکھنے والے کا ضمیر مطمئن ہو جاتا ہے اور وہ اپنے مستقبل کے حوالے سے پریشان نہیں رہتا، بلکہ وہ اللہ تعالیٰ کے عفو ودرگزر اور رحمت کی امید رکھتا ہے اور اللہ تعالیٰ کے عذاب سے ڈرتا ہے۔ وہ یقین رکھتا ہے کہ یہ ہولناک دن ضرور آئے گا اور اس دنیا کے بعد ایک اور زندگی ضرور ملے گی۔ جب وہ دنیا کی کسی چیز سے محروم ہو جاتا ہے تو وہ آخرت کے حوالے سے امید رکھتا ہے کہ وہاں اسے ساری نعمتیں نصیب ہو جائیں گی۔ جب بھی اس پر کوئی مصیبت آتی ہے تو وہ اس پر صبر کرتا ہے اور اللہ تعالیٰ سے اجر کی امید رکھتا ہے۔ جب دنیا کی نعمتیں دیکھتا ہے تو اسے آخرت کی نعمتیں یاد آتی ہیں۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’اور یہ دنیا کی زندگی کچھ نہیں ہے مگر ایک کھیل اور دل کا بہلاوا، اصل زندگی کا گھر تو دار آخرت ہے، کاش یہ لوگ جانتے‘‘
(العنکبوت: 64)
وہ دنیا میں ویسا ہی رہتا ہے جیسا اللہ تعالیٰ نے اسے رہنے کا کہا ہے۔ وہ لوگوں پر احسان کرتا ہے۔ وہ زمین کو آباد کرتا ہے اور یقین رکھتا ہے دنیا کی بگڑی چیزیں آخرت میں سنور جائیں گی اور دنیا میں اگر باطل غالب ہے تو وہ آخرت میں ضرور رسوا ہو گا۔ فرمانِ الٰہی ہے:
’’جب وہ ہونے والا واقعہ پیش آ جائے گا۔ تو کوئی اس کے وقوع کو جھٹلانے والا نہ ہوگا۔ وہ تہ و بالا کر دینے والی آفت ہوگی‘‘
(الواقعۃ: 1-3)
اے اللہ! ہمیں آخرت پر مکمل ایمان رکھنے والا بنا۔ ڈر والے دن ہمیں امن نصیب فرما اور جنت میں داخل فرما!
درود وسلام بھیجیے رسول رحمت کہ جو تمام لوگوں کے لیے ہدایت کا پیغام لانے والے ہیں۔
اے اللہ! رحمتیں، برکتیں اور سلامتی نازل فرما اپنے بندے اور رسول محمد ﷺ پر، آپ ﷺ کے پاکیزہ اہل بیت پر، صحابہ کرام پر اور قیامت تک ان کے نقش قدم پر چلنے والوں پر۔
اے اللہ! اسلام اور مسلمانوں کو عزت عطا فرما! سرکشوں، بے دینوں اور مفسدوں کو رسوا فرما! اے اللہ! اپنے دین، اپنی کتاب، سنت رسول اور اپنے مومن بندوں کی مدد فرما!
اے اللہ! اے پروردگار عالم! جو اسلام اور مسلمانوں کے بارے میں یا ان کے دین اور علاقے کے بارے میں برا ارادہ رکھے، تو اسے خود ہی میں مصروف فرما دے، اسے برائی کے چکر میں گھیر دے اور اس کی چال اسی پر لوٹا دے۔
اے اللہ! مجاہدین فی سبیل اللہ کی نصرت فرما! اے اللہ! فلسطین میں اور ہر جگہ اپنی راہ میں جہاد کرنے والوں کی مدد فرما! اے اللہ! ان کا محاصرہ ختم فرما! ان کے احوال درست فرما اور ان کے دشمنوں کو ہلاک فرما!
اے اللہ! ہم تجھے تیرے عظیم ترین نام سے پکار کر سوال کرتے ہیں کہ ہر جگہ مسلمانوں پر نرمی فرما! اے اللہ! فلسطین، شام، عراق، یمن، برما اور ہر جگہ تو مسلمانوں کا ہو جا ! اے اللہ! تو ان پر رحم فرما! ان کی مصیبت دور فرما! انہیں جلد اچھے دن نصیب فرما! اے اللہ! ان کے احوال درست فرما! انہیں ہدایت پر اکٹھا فرما اور انہیں برے لوگوں کے شر سے محفوظ فرما!
اے اللہ! سرکشوں اور ظالموں اور ان کے مددگاروں کو ہلاک فرما!
اے اللہ! ہمارے حکمران خادم حرمین کو ان اعمال کی توفیق عطا فرما جن سے تو خوش اور راضی ہوتا ہے۔ اسے نیکی اور پرہیز گاری کی طرف لیجا۔ اے اللہ! اسے اور اس کے نائب کو اور اس کے معاونین کو ان اعمال کی توفیق عطا فرما جن میں ملک اور قوم کی فلاح وبہبود ہے۔
اے اللہ! سرحدوں کی حفاظت کرنے والے ہمارے بھائیوں کی نصرت اور مدد فرما! وہ مجاہد جو ہمارے امن وامان اور مقامات مقدسہ کی حفاظت کے لیے جانیں پیش کر رہے ہیں ، یا اللہ! تو ان کا مدد گار، معاون اور نگہبان بن جا۔
اے اللہ! ہمارے ملک اور تمام مسلم ممالک میں امن وسلامتی عام فرما! اے اللہ! ہمیں ہمارے بروں کی برائی سے محفوظ فرما! فاجروں کی چالوں اور دن اور رات کے ہیر پھیر سے محفوظ فرما!
’’اے ہمارے رب! ہمیں دنیا میں بھی بھلائی دے اور آخرت میں بھی بھلائی اور آگ کے عذاب سے ہمیں بچا‘‘
(البقرۃ: 201)
اے اللہ! ہمارے گناہوں کو معاف فرما! ہمارے عیب چھپا، ہمارے معاملات آسان فرما! اور ہماری نیک خواہشات پوری فرما! اے اللہ! ہمیں، ہمارے والدین کو، آباء واجداد کو اور ان کی نسلوں کو، ہماری بیویوں کو اور ہماری نسلوں کو معاف فرما! یقینًا تو دعا سننے والا ہے۔
اے اللہ! ہمارے روزے، قیام اور دعائیں قبول فرما! ہمارے نیک اعمال قبول ومنظور فرما! یقینًا تو سننےاور جاننے والا ہے۔ ہماری توبہ قبول فرما! یقینًا تو توبہ قبول کرنے والا اور رحم فرمانے والا ہے۔
’’پاک ہے تیرا رب، عزت کا مالک، اُن تمام باتوں سے جو یہ لوگ بنا رہے ہیں۔ اور سلام ہے مرسلین پر۔ اور ساری تعریف اللہ ربّ العالمین ہی کے لیے ہے‘‘
(الصافات: 180-182)
ترجمہ: محمد عاطف الیاس

Hits: 38

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

غیب اور آخرت پر ایمان کے ثمرات-خطبہ جمعہ بیت اللہ” ایک تبصرہ

اپنا تبصرہ بھیجیں